//جب اُن کو یاد قسم ہی نہ ہو تو کیاکیجئے
urdu_shairy

جب اُن کو یاد قسم ہی نہ ہو تو کیاکیجئے

فہمیدہ مسرت احمد


خُمارِ رنج و اَلم ہی نہ ہو تو کیا کیجئے

سِتم سے بڑھ کےسِتَم ہی نہ ہو تو کیا کیجئے

اگرچہ شہر کا دَستُور ہے زباں بندی

مگر یہ آنکھ بھی نم ہی نہ ہو تو کیا کیجئے

چَمن میں سَرو سَمن کی کوئی کمی تو نہیں

نگاہِ شوق بَہم ہی نہ ہو تو کیا کیجئے

سُخن کے واسطے اوزان شرط ہے صاحب

غزل کا کوئی رِدَھم ہی نہ ہو توکیا کیجئے

وہ جن کے نام پہ ہم کو کیا گیا مصلوب

انہی کا دین دھرم ہی نہ ہو تو کیا کیجئے

ہزار بار منایا ہے منتیں کر کے

تمہارا زعم جو کم ہی نہ ہو تو کیا کیجئے

اُنہیں یہ ضد کہ کریں جی حُضوریاں ہر پل

قصیدہ ہم سے رقم ہی نہ ہو تو کیا کیجئے

تمام شکوے مُسَّرت فضول لگتے ہیں

جب اُن کو یاد قسم ہی نہ ہو تو کیاکیجئے