//بھنڈی ذیابطیس سے بچا سکتی ہے

بھنڈی ذیابطیس سے بچا سکتی ہے

۔ بھنڈی اکثر اور بیشتر افراد کی پسندیدہ سبزی ہے مگر اس کے بے شمار فوائد سے متعلق کم ہی افراد جانتے ہیں۔

ماہرین غذائیت کے مطابق بھنڈی سُپر فوڈز یعنی غذائیت سے بھر پور سبزیوں میں شمار کی جاتی ہے، آسانی سے دستیاب بھنڈی سبزی کو ایک خاص حیثیت حاصل ہے۔  بھنڈی کو کئی طرح سے پکا کر کھایا جاتا ہے، اس کو تل کر بطور اسنیک بھی استعمال کیا جاتا ہے، بھنڈی کے بے شمار فوائد ہیں جنہیں جان کر جو افراد اسے کھانا پسند نہیں کرتے وہ بھی بھنڈی کو اپنی غذا میں شامل کرنے پر مجبور ہو جائیں گے۔

ماہرین غذائیت کے مطابق بھنڈی میں وٹامن سی، ای، کے، اے، فائبر، پوٹاشیم اور قدرتی طور پر اینٹی آکسیڈنٹ جز پائے جاتے ہیں جس کے استعمال سے مندرجہ ذیل طبی فوائد حاصل ہوتے ہیں :

وزن میں کمی کا سبب بنتی ہے

وزن میں کمی کے خواہشمند افراد کے لیے بھنڈی کا غذا میں استعمال مفید ثابت ہوتا ہے، غذائیت سے بھر پور بھنڈی مطلوبہ وٹامنز اور منرلز فراہم کر کے کمزوری اور ڈائٹنگ کے اثرات چہرے پر آنے سے روکتی ہے، بھنڈی کے استعمال سے بار بار بھوک محسوس نہیں ہوتی۔

شوگر متوازن سطح پر رکھنے میں مدد فراہم کرتی ہے

بھنڈی میں ’گلائسیمک انڈیکس ‘ کی سطح کم پائی جاتی ہے، جس کے سبب خون میں گلوکوز کی سطح کو برقرار رہنے میں مدد ملتی ہے، بھنڈی میں ایک ’میریسیٹن‘ نامی جز بھی پایا جاتا ہے جس کے نتیجے میں انسانی جسم میں موجود پٹھے آسانی سے شوگر کو جذب کر لیتے ہیں، اس طرح سے خون میں موجود شوگر لیول کو متوازن رہنے میں مدد ملتی ہے۔

دل کی صحت برقرار رکھتی ہے

خون میں کولیسٹرول لیول بڑھ جانے سے دل کے عارضے کے خدشات بھی بڑھ جاتے ہیں، فائبر سے بھرپور بھنڈی خون میں شوگر سمیت کولیسٹرول کی سطح برقرار رکھنے میں بھی مدد فراہم کرتی ہے۔ بھنڈی میں ’پولی فینول کمپاؤنڈ‘ بھی پایا جاتا ہے جو شریانوں میں مضر صحت کولیسٹرول کو جمنے سے روکتا ہے۔

بھنڈی کا استعال کینسر سے بچاتا ہے

جرنل بائیو ٹیکنالوجی لیٹرز میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق بھنڈی کا استعمال 65فیصد تک چھاتی کے سرطان کو بننے سے روکتا ہے جبکہ بھنڈی میں ’ انسلوبل فائبر ‘ پائے جانے کے سبب نظام ہاضمہ بھی درست رہتا ہے جس کے نتیجے میں آنتوں کے کینسر کے خدشات میں بھی کمی آتی ہے۔

صاف جِلد

بھنڈی میں قدرتی اینٹی آکسیڈنٹ پائے جانے کے سبب جِلد متعدد بیماریوں سے محفوظ رہتی ہے اور جِلد پر جُھریوں کے آنے کا عمل بھی آہستہ ہو جاتا ہے۔

حاملہ خواتین کے لیے بہتر غذا

طبی ماہرین کے مطابق حاملہ خواتین کو بھنڈی کا زیادہ سے زیادہ استعمال کرنا چاہیے، اس کے استعمال سے وٹامن بی9 کی مطلوبہ مقدار حاصل ہوتی ہے اور جسے عام زبان میں فولیٹ بھی کہا جاتا ہے، فولیٹ نوازئیدہ بچے میں دماغ بنانے اور اس کی کارکردگی کو بہتر بنانے میں مدد فراہم کرتا ہے۔

قوت مدافعت بڑھاتی ہے

بھنڈی میں وٹامن سی کی بھر پور مقدار میں پایا جاتا ہے، وٹامن سی کے استعمال سے انسانی جسم میں بیماریوں سے لڑنے والے نظام ’امیون سسٹم‘ یعنی قوت مدافعت کو مضبوط بننے میں مدد ملتی ہے جس سے انسانی جسم کا موسمی اور وائرل انفیکشن سے بچنا ممکن ہو جاتا ہے۔