//کسی کے خوف میں اپنی خوشی تلاش کرنا چھوڑ دیں

کسی کے خوف میں اپنی خوشی تلاش کرنا چھوڑ دیں

تحریر نادیہ مشتاق پاکستان

سمجھ نہيں آتي کہ کسي کو ڈرا کر کونسي خوشي ملتي ہے ؟ اپنے خيالوں ميں گُم ايک انسان کو اچانک چونکا کر اُسکا سکون برباد کر کے کيسے لوٹ پوٹ ہو کر اُس خوابيدہ انسان کا مذاق اُڑا ليتے ہيں لوگ ؟ کيسے دوسرے کے ڈر سے لطف اُٹھاتے ہيں ؟ کيسے ؟ اب اگر عام زندگي کے معمولات چل رہے ہوں اور يکدم انہوني ہو جائے تو ايک نارمل انسان چونک تو جائيگا نا لرز جائيگا خوف کھائيگا۔ تو ايسے ميں کوئي کھِسکا ہوا يا عقل سے عاري ہي ہوگا جو ہنسے گا۔

الميہ پتہ ہے کيا ہے ؟ ہم سب کِھسکے ہوئے ہيں۔

بچے کو عجيب و غريب شکل کا کِھلونا لا ديں گے جس ميں آگ اُگلتي بتياں لگي ہوں اور ميوزک کي بجائے ايمرجنسي گاڑيوں والا سائرن، اس پر وہ معصوم جس نے بس ماں باپ کي شکل اور آواز کو اپنا کمفرٹ ليول بنايا ہو وہ روئے نہ تو کيا کرے ؟

بھئي کِھلونا بچے کے ليے لائے ہو يا اپنے ليے ؟ خود محظوظ ہو رہے ہيں، والدين بچے کو بہلانے کي بجائے اُسکے خوف پر اُسکي وڈيو بنا رہے ہيں۔ آپ کو تو پتہ ہے يہ کھلونا ہے اسکا بٹن دباؤ تو بند ہو جائيگا تبھي ہنستے ہيں نا آپ ؟ تبھي آپکو آپکا روتا بِلکتا بچہ ہنسي ٹھٹھے کا سامان لگتا ہے، تبھي آپ ہر دو منٹ بعد ہر آنے جانے والے کو بُلا بُلا کر اپنے بچے کا تماشا ديکھاتے ہيں کہ ديکھيں يہ کھلونا ديکھ کر ہمارا بچہ ڈرتا ,ديکھنا کيسے روتا۔ واہ

سوچيں آپ تيرنا نہيں جانتے اور آپ کو بار بار کوئي گہرے پاني ميں دھکا دے دے يا دھکا دينے کي کوشش کرے تو ؟ اور ايسے ميں کوئي تيراک آپ پر تالياں بجائے آپ پر آوازيں کسے آپکي وڈيو بنائے آپ پر ہنسے تو ؟

بچے کو پُر اعتماد بنانے کے اور بہت سے طريقے ہيں۔

سو جاؤ بلي آ جائيگي، کھانا کھاؤ ورنہ باگڑ بلا آ جائے گا، کہنا مانو ورنہ جِن بابا اُٹھا کے لے جائيگا۔ ايسے دہشت گردي پھيلانے والے والدين کي بات تو بس نہ ہي کرئيے۔

جو ماں باپ اب بھي ايسا کرتے ہيں وہ جھوٹ، فريب، دھوکہ اور ذہني تشدد کرنے کے مرتکب ہيں۔ بس کوئي سمجھا دے مجھے کہ کسي کي پريشاني ديکھ کر بلکہ پريشاني کا موجب بن کر کيسے لطف اُٹھايا جاتا ہے ؟ کيسے ؟

سبھي کسي نہ کسي شے سے خوف کھاتے ہيں، آگ، پاني اُونچائي، جنگلي جانور وغيرہ اور ايسي سبھي خطرناک چيزيں جن سے جان جانے کا خطرہ ہو خوف تو آتا ہے۔ اگر آپ ان ميں سے کسي شے کا خوف نہيں رکھتے تو آپ اپنا علاج کروائيں۔

ليکن بہت سے تقريباً سبھي لوگ، آپ سميت ( ميں يقين کيساتھ کہہ سکتي ہوں ) کسي نہ کسي بظاہر معمولي يا بے ضرر يا جس سے نقصان پہنچنے کا خدشہ ہو يا خدشہ نہ بھي ہو، خوف اور ڈر رکھتے ہيں۔

لوگ کُتے، بلي سے بھي ڈرتے ہيں چوہے سے بھي چھپکلي سے بھي لال بيگ سے بھي۔ جبکہ کچھ لوگ بليوں کو اپنے ساتھ اپنے بستر پر سُلاتے ہيں۔ اب اگر ايک انسان جو بلي سے ڈرتا ہو يا يوں کہہ ليں ناپسند کرتا ہو، ايسے ميں پالتو بلي رکھنے والے کي کيا بہادري ہے ؟ يہ حق کيسے مل گيا اُسے کہ وہ دوسرے انسان کو ڈرپوک ہونے کے طعنے دے، اُسکا مذاق اُڑائے يعني يہ کوئي دستور ہے ؟ کونسا اخلاق ہے ؟ کہاں سے اس جہالت کي ڈگري ملتي ہے ؟

کسي پر نقلي چھپکلي پھينک کر اسکي خوف بھري چيخ پر قہقہے لگانے سے، دروازے کي اوٹ ميں کسي کو بھاؤ کہہ کر ڈرانے سے پرينکسٹر کا تمغہ جيت کر، ا سوشل ميڈيا پر دلکش ويڈيو کا بہکاوا دے کر وڈيو کے آخر ميں خوفناک کلِپ لگا دينا، کسي کو بے بنياد خبر پہنچا کر چونکانے سے کيا ثابت کرتے ہيں لوگ ؟ کہ وہ بہت بہادر ہيں اور دوسرا بندہ ڈرپوک ہے ؟

تھوڑي سي عقل استعمال کريں تو آپکو اندازہ ہو کہ آپ کونسے پاگل پن ميں مبتلا ہيں کہ آپکو دوسروں کي تکليف کا احساس نہيں ہوتا، احساس ہونا دور کي بات آپ کسي کي تکليف پر قہقہے لگاتے ہيں۔

اور بھي بہت سے خوف انسان کو اندر ہي اندر کھائے جا رہے ہوتے ہيں جنکا اظہار کرنے سے بھي اُسے ڈر لگتا ہے۔ کسي بہت ہي پيارے کو کھو دينے کا خوف، اپني موت کا خوف اور پھر معاشرتي دباؤ ميں آکر دنيا کا مقابلہ نہ کر پانے کا خوف، موٹا ہونے کا دُبلا رہ جانے کا، لمبے قد کا چھوٹے قد کا، کالے، گورے کا، پہننے اُوڑھنے کا ہر شے ميں سہم اور ڈر ہوتا ہے کہ کہيں کوئي ہم پر ٹھٹھہ نہ کرے۔ ہم سب اس خوف ميں مبتلا ہيں اور ہمارے رويے اس خوف کو فروغ دينے کا ذريعہ ہيں۔ “کوئي کيا کہے گا “ ايسي بلا ہے جو ہم سے -ہماري شناخت چھين رہي ہے ہم اپني خوشي اور اپني پسند سے کچھ نہيں کر پاتے۔ يہ لمحۂ فکريہ ہے