//ڈبہ

ڈبہ

تحریر قدسیہ عالم فرانس

گھپ اندھيري سياہ رات جيسا کالا لباس پہن کر جولي نے سياہ ہي سکارف گلے کے اردگرد لپيٹا۔ وہ سر تا پاسياہ رنگ ميں ملبوس تھي سياہ جو سوگ اور ماتم کا رنگ ہے۔ جو کسي مرنے والے کي آخري رسومات کے وقت پہنا جاتا ہے اورايک خاص اہتمام سے اسے اسکےآخري سفر پر روانہ کيا جاتا ہےاس کي خوبياں ياد کر کے ماتم کيا جاتا ہے۔ ليکن يہ ماتم اور يہ آخري رسومات ہر کسي کا نصيب نہيں ہوتيں۔

ايک گہري اور ٹھنڈي آہ بھر کر جولي نے اپني ہمت مجتمع کي اور اپنے گھر سےنکلي۔ اسے کيتھي کے پاس جانا تھا اس سے معافي مانگنے۔باہر نکلنے سے پہلے وہ اپنا بيگ اٹھانا نہ بھولي تھي۔ قبرستان اس کے گھر سے تقريباً ايک گھنٹے کي مسافت پر تھا اس لئے اس نے کيب بلوائي تھي۔ ايک قبرستان اس کے اپنے ٹاؤن سنٹر ميں بھي تھا۔ جس کا گيٹ کھلا ہي رہتا تھا۔ گيٹ کے پاس ہي ايک نل لگا ہوا تھااور دو تين فوارے دھرے ہوئے تھے۔ لوگ آتے اپنے پياروں کي قبروں کے پاس کھڑے ہوتے۔ ان پر لگے صاف ستھرے سنگ مرمر کو مزيد صاف کرتے پودوں کو پھولوں کو پاني ديتے اور نمناک آنکھيں پونچھتےباہر نکل جاتے۔

کيتھرين کو بھي يہيں دفن ہونا تھا۔اس کي آخري رسومات بھي يہيں ہوتيں جولي کي نگراني ميں ليکن وہ کيا ہےکہ ہر کسي کےنصيب ميں آخري خواہش کاپورا ہونا کہاں لکھا ہے۔ اوريہ ہي دکھ تھا جوجولي کے دل ميں چھيد کيئے جا رہا تھا۔۔کيب ہائي وے پر آچکي تھي اس نے اداسي سے باہر ديکھا اپنے آنسو صاف کيئے۔ پھر اپنے بيگ کے اوپر ہاتھ رکھ کر اس کے اندر ايک پرانے بٹن، فيتے دھاگوں وغيرہ والےڈبے کي موجودگي محسوس کي۔ يہ ڈبہ کيتھرين کي امانت تھا۔ کيتھرين اس اولڈ ہوم کي ايک مکين تھي جہاں جولي کام کرتي تھي۔

جولي پچھلے دس سال سے اس اولڈ ہاؤس ميں کام کر رہي تھي۔ يہاں کے عمر رسيدہ رہائشيوں سے اسے خاص انسيت تھي۔ اور کيتھرين سے کچھ زيادہ ہي تھي۔

جولي کي ملازمت کا پہلا دن تھا اوراسي سالہ کيتھرين کو اولڈ ہوم کا باسي بنے دو چار ہي دن ہوئے تھے۔ دونوں وہاں ايکدوسرے کا دل لگنے کا سبب بن گئيں۔ جولي کے ماں باپ نہ تھے اور کيتھرين کے بچے خاوند سب فوت ہو چکے تھے۔

کيتھرين ايک خوش مزاج اور اپنے معمولات ميں پختہ خاتون تھي۔ ہر اتوار کو عبادت کے بعد ايک پرانا سا ڈبہ کھول کر بيٹھ جاتي۔ چيزوں پر سے ناديدہ گرد جھاڑتي۔ ايک ايک چيز اٹھا کر کتني کتني دير ديکھتي رہتي۔ پھر بہت احتياط سے آہستہ آہستہ سب واپس رکھتي اور ڈبے کو احتياط سے سنبھال ديتي۔ کہنے کو يہ ايک پرانے بٹنوں پنوں فيتوں وغيرہ کا ڈبہ تھا۔درحقيقت اس ڈبے ميں کيتھرين کي گزري زندگي بند تھي۔ کچھ نرم گرم کچھ ٹھٹھرتي ياديں تھيں جنہيں وہ توجہ کي گرمي ديتي ان سے وابستہ محبت کا الاؤ جلاتي کچھ دير ہاتھ تاپتي اور پھر بند کر کے رکھ ديتي۔

عملے کے لوگ کيتھرين کو سنکي سمجھتے تھے جو گھنٹوں بےکار بٹنوں وغيرہ کو گھورتي رہتي تھي۔ جولي نے کبھي خود سے نہ پوچھا تھا کہ يہ کيا ہے پر اسے اندازہ تھا کہ اس ڈبہ کے اندر جو کچھ بھي ہے وہ خاص ہے۔۔چند ماہ پہلے کي بات ہے کيتھرين بھلي چنگي تھي اس کي گہري سبز آنکھوں ميں ابھي بھي چمک تھي۔ اس کا چہرہ ابھي بھي شاداب تھا اپنے برف سے سفيد بالوں کو وہ ابھي بھي اچھے سے سنوارتي تھي۔ اس کے وہي معمولات تھے۔ اس اتوار کو بھي جولي ہي کي ڈيوٹي تھي جب کيتھرين اپنے دلپسندمشغلے ميں منہمک تھي۔ جولي اس کے پاس جا بيٹھي۔

واؤ کيتھي آپ تو بہت خوش لگ رہي ہيں اپنے اس خزانے کے ساتھ۔

ہاں جولي يہ بظاہر بيکار نظر آنے والي چيزيں ميرے لئے ايک خزانے سے بڑھ کر ہيں۔ آؤ آج تمہيں دکھاؤں کيتھرين نے پر شوق آواز و لہجےميں جولي کو دعوت دي۔ اس ڈبے کي ہر چيز کے ساتھ اک ياد وابستہ ہے يہ کہتے ہوئے اس نے ڈبے ميں ہاتھ ڈالا اور اس کي نازک ضعيف لرزتي انگليوں نے ايک زرد ہوتا ہوابٹن اٹھايا يہ ديکھو يہ سفيد موتي جيسا بٹن ميرے بيٹے نے بپتسمہ والے دن جو سوٹ پہنا تھا اس کي قميص کو ميں نے خود لگايا تھا۔ميرا الفريڈبہت پيارا لگ رہا تھا۔کيتھرين کي آواز کي گہرائي اور آنکھوں ميں ہلکورے ليتے جذبوں سے لگا جيسے وہ دورکہيں کسي پرانے گرجا ميں کھڑي اپنے بيٹے پرمقدس پاني ڈلوا رہي ہے اور انتہائي محبت سے اسے ديکھ رہي ہے۔ اوہ۔۔ اچانک جيسے وہ واپس آگئي يہ ٹائي پن ديکھو يہ ميرے شوہر کي ہے جس دن ہمارے بيٹے نے ڈگري لي تھي اس دن وہ يہ والي ٹائي پن لگا کر گيا تھا۔ ہم سب بہت خوش تھے۔ ٹائي پن بہت محبت سے واپس رکھ کر اس نے پيتل کا بنا ايک ستارہ اٹھا کر آنکھوں کے سامنے کيا اور جيسے نظروں سے اسکي چمک جانچي يہ ميرے پہلے شوہر کے يونيفارم کاتھا۔ وہ آرمي ميں تھا، ہماري شادي کے چند ماہ بعد محاذ جنگ پر کسي گولي کا شکار ہو گيا تھا۔ ہماري پسند کي شادي تھي۔۔ اس کے جانے کے بعد ہي ميرا بيٹا پيدا ہوا تھا۔ اس کے دوست نے جنگ کے بعد آکر مجھے اس کي کچھ نشانياں دي تھيں۔ يہ ستارہ بھي ان ہي ميں سے ايک ہے۔

يہ جو ٹائي پن ميں نے تمہيں ابھي دکھائي تھي يہ ميرے دوسرے شوہر کي تھي۔

وہ دراصل ميرے پہلے شوہر کا دوست تھا جنگ عظيم ختم ہوئي لوگ تباہ برباد تھے۔ ميرا بھي کوئي سہارا نہ تھا تب اس نے مجھے سہارا دينے کے ليئے مجھ سے شادي کر لي اور مرتے دم تک بہت اچھے سے نبھائي۔ کيتھرين کي سبز سمندر آنکھوں ميں غم کے سفينے شکر کي لہروں پر تير رہے تھے۔اس نے گلا صاف کيا اور بولي اس زمانے ميں لوگ اچھے تھے ايکدوسرے کا احساس کرتے تھے۔وہ اس ڈبے ميں چيزوں کو نہيں بلکہ اپني يادوں کو ٹٹول رہي تھي ان يادوں ميں اپنے دکھ سکھ تلاش کر رہي تھي۔

پھر اس نے چھوٹے سے شيشے کے دو ٹکڑے اٹھائے ايک جولي کو پکڑايا ايک ميں اپنا عکس ديکھا مسکرائي اور بولي الزبتھ ميري بيٹي چھ سال کي تھي يہ اس کے گڑيا گھر پر لگا ہوا تھا۔ ايکدن روتي ہوئي ميرے پاس لے کر آئي مام يہ جوڑ ديں۔ پگلي تھي ٹوٹا شيشہ بھي کبھي جڑتا ہے اسے بہلانے کو اس ڈبے ميں رکھ ديا پھر بعد ميں گنجائش کے مطابق اسے نيا شيشہ لے ديا تھا۔کيتھرين نے ايک گہري سانس لي اور کچھ دير کو خاموش ہو گئي بيٹي کو بچپن سے نکل کر جواني کي طرف جاتا ديکھ رہي ہوجيسے۔جولي نے پلاسٹک کے چھوٹے سے لفافے ميں بوسيدہ ہوتے فيتےاور ربن وغيرہ ديکھے۔ اس ميں کيتھي کي زندگي کي خوشياں غم سب بند تھے۔بيٹي کے عروسي لباس سے بچا ربن، ماں کے ہاتھوں کاکڑھا ہوا فيتہ اور نہ جانے کياکچھ۔۔ ۔کيتھي نے باريک کڑھائي سے مزين اپني ماں کے ہاتھوں سے کڑھافيتہ جولي کو دکھاتے ہوئے فخريہ کہا ايسي باريک اور خوبصورت کڑھائي اب کون کر سکتا ہے۔ ميري ماں کو کڑھائي کا بہت شوق تھا۔کيتھرين کافي دير تک جولي کو اپني ماں کے بارے ميں بتاتي رہي۔

اس ڈبے ميں بند کوئي چيز بے جان نہ تھي ان کے ساتھ زندہ کہانياں تھيں جو کيتھرين کي ہر سانس کے ساتھ سانس لے رہي تھيں۔ اور جو کيتھرين کي سانسوں کو جلا بخش رہي تھيں۔ وہ کسي نے کہا ہے نہ کہ حسين يادوں کو اپنے ساتھ جيتا رکھوانہيں توجہ کي کھاد پيار کا پاني ديتے رہو۔ يہ ہري بھري رہتي ہيں اور ياد کرنے والے کو بھي تروتازہ رکھتي ہيں۔۔

کافي دير تک کيتھرين ان چھوٹي چھوٹي نشانيوں کو لے کر ماضي کي گليوں ميں جولي کا ہاتھ پکڑ کر چلتي رہي رہي کبھي ہنس پڑتي کبھي رو ديتي، اپنے باپ کے ايک سوئيٹر سے بچي اون کو ہاتھ ميں پکڑ کر بہت دير تک سہلاتي رہي جيسے باپ کي محبت کي گرمي کو محسوس کر رہي ہو۔ جولي نے اس دن کيتھرين کے بارے ميں بہت کچھ جاناتھا۔اور اسکي کيتھرين سے انسيت اس روز دوچند ہو گئي تھي۔ کيتھرين نے ڈبہ بند کياايک طرف رکھا اور جولي کا ہاتھ ہاتھوں ميں پکڑ کر ايک بات کہي۔۔ اوہ ہو کيتھي ابھي تم نے بہت جينا ہے جولي نے اسے پيار سے کہااور جانے کے لئے اٹھ گئي۔ پتہ ہي نہيں چلا تھااور دو گھنٹے گزر گئے۔۔ شکر ہے آج اولڈ ہوم ميں زيادہ کام نہيں تھا۔ دن خيريت سے گزر رہے تھے جب اچانک دنيا اس موذي وبا کي لپيٹ ميں آگئي۔ ان کے اولڈ ہوم ميں لوگ بيمار ہونے لگے ہسپتال جانے لگے کبھي واپس نہ آنے کے لئے۔۔ کيتھرين کي طبيعت اچانک خراب ہوئي اسے ہسپتال لے گئے اور پھر جولي اسے کبھي نہ ديکھ سکي تھي دو دن بعد وہ فوت ہو گئي تھي۔ کيب آہستگي سے رک گئي۔ جولي کے خيالات کا تانتا ٹوٹا اس نے انگلي کي پور سے اپنا آنسو صاف کيا ڈرائيور سے رکنے کو کہا اور بيگ سنبھالتے ہوئے اتر آئي۔ سينے پر کراس کا نشان بناتي کچي پکي تازہ قبروں ميں راستہ ڈھونڈتي وہ آگے بڑھي اولڈ ہوم کے بےشمار باسي يہاں ابدي نيند سو رہے تھے۔ جولي کو وہ سب بے تحاشا ياد آنے لگے۔۔ يسوع مسيح ان سب کي روحوں کو دائمي امن اور سکون بخشنا اس نے سب کے لئے اجتماعي دعا کي۔ يہ سب ان دنوں ميں فوت ہوئے تھےجب دن ميں سينکڑوں موتيں ہو رہي تھيں۔ کون کب اور کيسے مٹي کے ساتھ مٹي ہوا وہ نہ جانتي تھي۔ جب سينکڑوں موتيں ايک دن ميں ہو رہي ہوں تو پھر جنازے، آخري رسومات۔۔ ۔اور آخري خواہشات کي تکميل اپنے معني کھو ديتي ہے۔۔۔صرف مٹي کو مٹي کے حوالے کرنا مقصود ہوتا ہے۔۔ کيتھرين کہاں مٹي کے ڈھير کا حصہ بني جولي کو بعد ميں پتہ چلا تھا۔ دن اور تاريخ کے مطابق اس نے کيتھرين کي قبر تلاش شروع کي۔۔ اسے وہ دن ياد آرہا تھا جب کيتھرين نے اسکے ہاتھ ہاتھوں ميں لے کرکہا تھا “اپنے خاوند کے انتقال کے بعد اس اولڈ ہاؤس ميں آتے وقت ميں نے گھر کي ہر چيز بيچ دي تھي يا بانٹ دي تھي۔ يہ ڈبہ مجھے اپنے جينے کا سہارا لگا ميں اسے ساتھ لے آئي تھي۔ اب اسےميرے ساتھ دفن کرناتمہاري ذمہ داري ہے۔ اسے ميري آخري خواہش سمجھنا۔کيتھرين نے ملتجي اور پر اميد نظروں سے اسے ديکھااور کہا پياري جولي ميري يہ آخري خواہش ضرور پوري کرنا“۔۔۔۔۔

قبر کے پاس پہنچ کر جولي نے بيگ سے وہ ڈبہ نکلا قبر پر رکھا اور پھوٹ پھوٹ کر رو پڑي۔۔ کيتھي مجھے معاف کرنا اس ظالم وبا نے مجھے تمہاري آخري خواہش پوري نہيں کرنے دي۔ (ماخوذ)