//ٹھنڈی سانس…

ٹھنڈی سانس…

۔ تحریر بشریٰ عمر بامی

ٹھنڈي سانس …لمباسا ہونکا …پاني کا بُلبلہ..بظاہر ٹھنڈي لمبي سي سانس مگراپنے اندرگہرےجذبات کي تپش رکھتي .. دل ميں غم .. اداسي کےاٹھتے مدوجزر کوسموئے ..ٹھنڈک اور حدت کا تکليف دہ امتزاج رکھتي .. روح کے بہاو کےسنگ …ماہ و سال کے تھپيڑےليتي …دنيا کے نشيب وفراز کے سنگ سنگ .. جسم و جان سے ُلُکن ميٹي کھيلتي ..اداسي کي گرم لُو… اور …ہجر کي گھٹن ميں ڈوبي …ايک بے بس مجبور انسان کي لي لمبي ٹھنڈي سانس ..اور ہونکا کبھي کبھي آہ ميں تبديل ھو کر فضا ميں دکھ بھر ديتي ہے ..روشني کو اندھيرے ميں بدلتي ہے … مگر روح کي حدود تک۔

يہ آہ …سرد موسم گرم اور گرم موسم کو سرد کرنا بھي خوب جانتي ہے ۔

بس ..مرد ہو يا عورت غم کي کالي چھايا.. دل و جگر کےآس پاس کہيں …ٹھکانہ بنائے رہتي ہے..ہاں !کبھي کبھي گبھرا کر اپنے مسکن سے بے قابو ہو کر ايک دم باہر نکل پڑتي ہے .. مگر اگلے ہي لمحے باہر کي دنيا کے بےرحم نظروں کي تاب نہ لا کر واپس گہري کھائ کي طرف چپکے سےواپس جانے ميں ہي عافيت سمجھتي ہے ۔۔بے چاري آہ …واہ کي اميد لئے آنکھ موند ليتي ہے .. صبر کي چادر اوڑ ھ کر ..زمانے کي بے رحم نظريں اسے مجبور کر ديتي ہيں کہ چُپ رہ.. سسکنا بھي نہيں ہونٹ سي لوورنہ…. گھُٹ کے مر جاؤ… خبر دار………..آواز نہ نکلنے پائے….دکھوں کي کال کوٹھڑي ميں غم کا دھواں بھر جائے تو..ايسے ميں جب پہلو ميں بے بس دل … زخمي پنچھي کي طرح اپنے پنکھ سميٹنے لگتا ہے تو … زخمي روح آکر سہارا بن کر سکون کا ايک لمحہ دينے کے لئے ہاتھ بڑھاتي ہے ..ايک ساعت کے لئے پاني کابلبلہ بن کر دُکھي وجود کو اپنے اندر سمو ليتي ہے …مگر ..وقت کےبے مہر سمندر ميں اٹھتي غم کي آندھيوں، طوفانوں کي زد ميں آ کر کبھي کبھي… اس نازک بُلبلے ميں سے چُپکے سے ہوا کا جھونکا بن کرنکل بھي جاتي ہے .. بالکل آزاد پنچھي کي طرح من موجي سي .. کھلي فضا ميں سانس لينے کے لئے .. سب غموں، دکھوں، جھنبھيلوں سے .. آزاد ہو کرلمبي بہت لمبي ان ديکھي ..ان جاني مسافتوں کي طرف … آہ…….