//نظم

نظم

تحرير طاہرہ زرتشت نازؔ

 

مفہوم و معاني سبھي رستے ميں کھڑے ہوں

ترتيب سے اوزان کے سب موتي جڑے ہوں

اترا ہے فلک سے يوں تخيّل کا ستارا

دل جھوم اُٹھا حسنِ مجسم سے ہمارا

يہ حسن تغزل ہے الہي ! يا پري ہے

دلہن کوئي سج دھج کےتصور ميں کھڑي ہے

خوشبو سے مہکنے لگيں الفاظ کي کلياں

آباد ہوئي جاتي ہيں مفہوم کي گلياں

کاش ايسي کوئي نظم کبھي ہم نےکہي ہو

تاثير دلوں پر بھي کئي روز رہي ہو

يہ سارےعناصر ہوں تو کہلاتے ہيں اشعار

اس کے ہي کرم سے ہے ملے طاقتِ گفتار

گر وسعتِ پرواز تخيل کو عطا ہو

اندازِ بياں ہم کو بھي غالب سا عطا ہو

ہم  پر بھي کرے نازؔ!  ادب  تا بہ  قيامت

ہم  ہوں کہ نہ ہوں کام  رہے  اپنا سلامت