//غزل

غزل

بشريٰ سحر کولکاتا

 

نہ چھو سکا کوئي جاں سوز حادثہ مجھ کو

بچا رہي تھي مجھے، ماں! تري دعا مجھ کو

ہزاروں چہرے نگاہوں ميں ميري آئے مگر

نہ بهايا کوئي بھي چہرہ ترے سوا مجھ کو

وہ آج ہوگيا خود گمرہي کے غارميں گم

دکھا رہا تها جو منزل کا راستہ مجھ کو

ميں سوچتي ہوں کہ تجھ کو کہاں تلاش کروں

نہ تيرا نام ہے معلوم نہ پتہ مجھ کو

دکھائي کس نے يہ تصوير بے حيائي کي

کہ جس کو ديکھتے ہي آگئي حيا مجھ کو

کسي سے کيوں ميں کروں وقتِ شام کا وعدہ

کہ ‘سحر ‘ہوں سحر سے ہے رابطہ مجھ کو