//ذرا دھيرے چل

ذرا دھيرے چل

نفيسہ محمود بانو آسٹریلیا

اے عمر رواں جلدي ہے کيا

ذرا دھيرے چل

ذرا دم تو لے ذرا تھم تو جا

ذرا دھيرے چل

کچھ فرض نبھانے ہيں ابھي

کچھ قرض چکانے ہے ابھي

ذرا دھيرے چل

سنجو کے جو رکھے تھے وہ

آنسو بہانے ہيں ابھي

ذرا دھيرے چل

گھونٹ گھونٹ کچھ لمحوں کو

پينا ہے ابھي

ذرا دھيرے چل

کچھ زخم پرانے رستے ہيں

ان زخموں کو سينا ہے ابھي

ذرا دھيرے چل

کاہے کي تجھ کو جلدي ہے

ذرا دھيرے چل

ذرا دم تو لے

 ذرا تھم تو جا

ذرا دھيرے چل