//اک پل ميں اُبھرتي ہيں سو رنگ ميں ڈھلتي ہيں

اک پل ميں اُبھرتي ہيں سو رنگ ميں ڈھلتي ہيں

فہميدہ مسرت احمدجرمني

 

اک پل ميں اُبھرتي ہيں سو رنگ ميں ڈھلتي ہيں

پرچھائياں يادوں کي منظر پہ تھرکتي ہيں

بيتاب تمنائيں کب دل سے نکلتي ہيں

زندانِ محبت ميں روتي ہيں سلگتي ہيں

رکھتے ہي نہيں ظالم کچھ پاس وفاؤں کا

پھر بھي يہ دعائيں ہيں جو لب پہ مچلتي ہيں

آئينے ميں سجتي ہے دن رات نئي صُورت

ہر روز تمنائيں پوشاک بدلتي ہيں

کيا پار لگے سوچو پھر ناؤ محبت کي

ہر سمت اناؤں کي جب آندھياں چلتي ہيں

کرتے ہيں قلم ان کو بے درد ہيں يہ ايسے

جو بيليں محبت کے جذبوں سے مہکتي ہيں

آسيبِ شبِ ہجراں انگڑائي جو ليتا ہے

کمرے کي فضائيں بھي وحشت سےسمٹتي ہيں